ہیری پاٹر کے چند خاص کرداروں کو خراج تحسین


انتباہ: یہ تحریر کسی مووی یا سیریز کا ریویو ہرگز نہیں ہے- یہ تحریر میرے دوستوں کی پسندیدہ سیریز ہیری پاٹر کے چند خاص کرداروں کو خراج تحسین پیش کرنے کے لئے لکهی گئی ہے- آپ یوں سمجهیں کہ اس تحریر میں ہیری پاٹر سیریز کے ہمارے ذہن پر ہونے والے اثرات کی ایک معمولی جهلک دکهائی گئی ہے- پوسٹ کی طوالت کے لئے پیشگی معذرت-

دیکها ایک خواب تو یہ سلسلے ہوئے…..

اور پهر Harry Potter نے وہ Elder Wand توڑ کر کهائی میں پھینک دی… اس کے سب ہنسی خوشی رہنے لگے… فلم کے آخر میں ننهے منے بچوں کو پینتیس سالہ والدین بنے دیکھ کر میری بےساختہ ہنسی چهوٹ گئی … پر شکر ہے 3 ماہ میں یہ سیریز تو مکمل ہوئی-
میں نے گہری سانس لے کر ٹیبلٹ بیڈ سائڈ ٹیبل پر رکها اور لمبی تان کر سو گئی-

ابهی تهوڑی ہی دیر گزری تهی کہ دهم کی آواز سے میری آنکھ کهل گئی… مندی مندی آنکهوں سے دیکها تو Aragog میرے بیڈ پر بیٹها اپنی لال سرخ بڑی بڑی آنکهوں سے مجهے گهور رہا تها-
میں چیخ مار کر بیڈ سے اچهلی اور بےساختہ Hagrid کو کوسنے لگی جو عجیب و غریب مخلوقات پالنے کا شوقین تها-

منہ ہی منہ میں بڑبڑاتی ہوئی فوراً کمرے سے باہر بهاگی-
سامنے سیڑهیوں کے پاس Dobby مسکین سی صورت بنائے کهڑا تها- مجهے غصے میں اپنی طرف آتا دیکھ کر ڈر گیا-
“ڈوبی نے کچھ نہیں کیا- ڈوبی بےقصور ہے- ڈوبی صرف اپنے مالک کا حکم مان رہا تها- ڈوبی کا مالک بہت ظالم ہے”-
اسے یوں منہ لٹکا کر مسلسل بولتا دیکھ کر میرا موڈ مزید خراب ہو گیا-
“ایک تو اس کے رونے ختم نہیں ہوتے”-

اسے نظرانداز کر کے میں نیچے آئی تو سامنے صوفے پر Dumbledore اپنی لمبی سفید داڑهی میں جوؤں والی کنگی پهیرتے ہوئے کسی گہری سوچ میں گم دکهائی دیئے-
ان کے دائیں طرف والے صوفہ پر Hermione ایک موٹی سی بهاری بهرکم کتاب میں سر دیئے بیٹهی تهی… میں نے آگے بڑھ کر کتاب کا نام دیکها-
“موویز پلانٹ کے 1000 بہترین ریویوز”
“واہ اتنی جلدی کتاب بهی چهپ گئی”- ابهی دل میں سوچ ہی رہی تهی کہ ڈمبلڈور میری طرف متوجہ ہوئے اور دهیمے سے مسکرائے-
“آگئیں آپ؟ میں نے ڈوبی کو بهیجا تها آپ کو جگانے”-
“اس نے جگایا کم ڈرایا زیادہ ہے جناب”- میں نے جل کر جواب دیا-
“خیر اس وقت زحمت دینے کی ایک بہت خاص وجہ ہے- ہمیں ایک خفیہ مشن میں فوری طور پر آپ کی مدد کی ضرورت ہے- ایک ایسا کام جو صرف آپ ہی کر سکتی ہیں-” 
“خیریت جناب؟” ڈمبلڈور کے پراسرار انداز پر میں نے تجسس سے پوچها-
ہمیں خبر ملی ہے کہ از دانست دنیا بهر کے لوگوں کو فلمی تاریخ کا بور ترین سیزن فارگو دیکهنے پر اکسا رہا ہے جو جادوگروں کے قانون کے مطابق کسی ذہنی ٹارچر سے کم نہیں ہے- ہم نے فیصلہ کیا ہے کہ ہم اس سیزن کا نام و نشان ہی صفحہ ہستی سے مٹا دیں- لیکن یہ کام آپ کی مدد کے بغیر نہیں ہو سکتا”-
“اف یہ دانست کبهی نہیں سدهرے گا ہنہ- اس نے بهی اس نک کٹے وولڈیمورٹ کی طرح لوگوں کی زندگی عذاب بنائے رکهنے کی قسم کها رکهی ہے…. اوہ اس کا تو نام ہی نہیں لینا تها”- میں نے بےساختہ ماتهے پر ہاتھ مارا اور حیرت سے ڈمبلڈور سے کہا-
“میں یہ کام اکیلی کیسے کر سکتی ہوں جناب؟ فارگو کی تو ہزاروں لاکھوں کاپیاں دنیا بهر میں پهیلی ہوں گی”-
“اس کا بهی حل ہم نے تلاش کر لیا ہے- مخبروں نے بتایا ہے ہاگورٹ کے ضرورتی کمرے میں ایک موبائل رکها ہے جو اس سیزن کا Horcrux ہے- اگر وہ تباہ کر دیا جائے تو پوری دنیا سے یہ سیزن ختم ہو جائے گا”-
“مگر میں ہاگورٹ کیسے جا سکتی ہوں؟ وہ تو بہت دور ہے” میں نے پریشانی سے پوچها-
“اس کا حل ہے میرے پاس”- اتنی دیر سے خاموش بیٹهی ہرمائنی اچانک بولی تو ہم دونوں اس کی جانب متوجہ ہوگئے-
وہ میرے پاس آئی اور ایک مشروب سا میری طرف بڑهایا-
میرے سوالیہ انداز میں دیکهنے پر وہ کہنے لگی-
“یہ Polyjuice کا کاڑها ہے اس میں میں نے ہیری پاٹر کا بال ملا دیا ہے- یہ پی لیں آپ کے کام آئے گا-“
میں نے جهجهکتے ہوئے وہ کاڑها پی لیا جس کا ذائقہ کچھ عجیب سا گهاس پهوس جیسا تها-

اچانک مجهے اپنے خدوخال بدلتے محسوس ہوئے اور سب کچھ دهندلا دکهائی دینے لگا- میں ابهی اس کی وجہ سوچ ہی رہی تهی کہ ہرمائنی پهر سے بول پڑی-
“اوہ ایک تو ہیری کا چشمہ ہر وقت ٹوٹا ہوتا ہے- صبر کریں میں ابهی ٹوٹم جوڑم منتر سے یہ ٹهیک کرتی ہوں- یہ کہہ کر اس نے اپنی چهڑی لہرائی اور “Oculus Reparo” کہا-
ایک جهماکا ہوا اور مجهے سب صاف دکهائی دینے لگا-

اس کے ساتھ ہی ڈمبلڈور نے مجهے اپنی جادو کی چهڑی elder wand دیتے ہوئے کہا
“اسے پاس رکهیں- یہ آپ کے کام آئے گی- ہاگورٹ میں پروفیسر سنیپ آپ کی مدد کریں گے”

پهر ہرمائنی نے ہیری پاٹر کا تیز ترین اڑنے والا جهاڑو Fire Bolt اور اپنی جادو کی پوٹلی میرے حوالے کی اور ممکنہ خطرے کے پیش نظر میرے اوپر “Expecto Petronum” کا خفاظتی منتر پڑهنا نہیں بهولی-
میں ان دونوں کو وہیں چهوڑ کر فائر بولٹ پر سوار ہوئی اور ہاگورٹ کو اڑان بهری-

ہاگورٹ کے بڑے گیٹ کے پاس میں نے اپنے جهاڑو کو بریک لگایا- اور گیٹ سے اندر داخل ہو گئی- دل ہی دل میں سوچ رہی تهی کہ سٹاف روم کے بارے میں کس سے پوچهوں کہ اچانک کوریڈور کے دائیں جانب کے چوتهے کمرے سے پروفیسر مک گونیگل کو نکلتے دیکها-

“مسٹر پاٹر آپ کو اس وقت کلاس روم میں ہونا چاہئے- آپ یہاں کوریڈور میں کیا کر رہے ہیں؟ جائیے فوراً کلاس میں جائیے-“
انہوں نے اپنے مخصوص رعب دار انداز میں انگلی اٹها کر کہا-
“یس پروفیسر مک گونیگل” میں نے ہیری پاٹر کی آواز میں مودبانہ انداز میں کہا اور سائیڈ پر ہو کر ان کو گزرنے کا راستہ دیا-

جب وہ تهوڑی دور چلی گئیں تو میں جلدی سے آگے بڑهی- 
“ہو نہ ہو یہی سٹاف روم ہوگا”-
میں فوراً اس کمرے کی طرف بڑهی جہاں سے پروفیسر مک گونیگل نکلی تهیں- میرا خیال درست تها-
سامنے ہی پروفیسر سنیپ کوئی عجیب سا لیپ اپنے بالوں پر لگا کر انہیں سیدها کر رہے تهے-
“دیکها میں جانتی تهی کہ ایسے سیدهے بال قدرتی ہو ہی نہیں سکتے- بڑے آئے سلکی زلفوں والے آدهے ادهورے خونی شہزادے…. ہنہ-” 
میں نے دل میں جل کر سوچا-

مجهے دیکھ کر پروفیسر سنیپ ہڑبڑا گئے اور وہ لیپ اپنی پشت پر چهپا لیا- میں نے ہیری پاٹر کی آواز میں ان سے ضرورتی کمرے کا پوچها-
انہوں نے مشکوک سے انداز میں مجهے سر سے پیر تک گهورا اور بائیں جانب اشارہ کر دیا-
اس سے پہلے کہ وہ مزید مجهے شک کی نگاہ سے دیکهتے میں فوراً وہاں سے نکل آئی- پیچهے سے پروفیسر سنیپ کی آواز آئی-
“یاد رکهنا ضرورتی کمرے میں جو چیز ڈهونڈو وہ نہیں ملتی اور جس کی تلاش نہ ہو وہ مل جاتی ہے- اور جو تمہیں چاہئے وہی وہاں داخل ہونے کی چابی ہے”-
میں نے اثبات میں سر ہلایا اور باہر آگئی-

بائیں جانب دیوار پر اداس مینا کی پینٹنگ لگی تهی- تین دفعہ مخصوص انداز میں دستک دی تو اداس مینا رونے لگی اور رو رو کر پاسورڈ مانگا-
“فارگو”- میں نے پاسورڈ بتایا تو وہ “ہنہ” کہہ کر غائب ہو گئی-
ابهی میں اس کے ہنہ پر غور کر ہی رہی تهی کہ پینٹنگ درمیان سے کهلی اور اس میں ایک دروازہ نمودار ہوا جسے کهول کر میں اندر چلی گئی-

ضرورتی کمرے میں ہر طرف ضرورتی سامان کا ڈهیر بکهرا پڑا تها-
مجهے پروفیسر سنیپ کی نصیحت یاد تهی سو اس کمرے میں یوں ٹہلنے لگی جیسے ابا جی کے باغ میں ٹہل رہی ہوں-
اچانک ایک میز پر مجهے ایک لشکارے مارتا موبائل دکهائی دیا-
میں جان گئی یہی میرا مطلوبہ موبائل ہے-

نئے ماڈل کا موبائل دیکھ کر ایک پل کو تو میری نیت خراب ہوگئی کیونکہ میرا ٹیبلٹ بهی بس اب آخری سانسیں لے رہا ہے لیکن پهر دوسرے ہی پل ہزاروں لاکهوں لوگوں کے قیمتی وقت اور ڈیٹا کے ضیاع کا احساس دل میں جاگا- اس سے بڑھ کر اس ذہنی اذیت کا احساس تها جو وہ اٹهانے پر مجبور کئے جا رہے تهے- 
“ضرور یہ ہوکروکس کا جادو ہے جو مجهے ورغلا رہا ہے-” 
یہ خیال آتے ہی میں نے ہر فالتو سوچ کو ذہن سے جهٹک دیا-
مجهے یاد تها ہوکرکس کو ہاتھ سے نہیں توڑنا-
میں نے ہرمائنی کی پوٹلی میں سے Basilisk کا ٹوٹا ہوا دانت نکالا اور موبائل پر زور سے مارا-

اچانک زور کی بجلی کڑکی، تیز آندهی آئی اور مجهے زور کا جهٹکا لگا اور دیکهتے ہی دیکهتے موبائل کو آگ لگ گئی اور وہ تباہ ہوگیا-

اس کے ساتھ ہی دور سے از دانست کی آواز سنائی دی – وہ تیزی سے اسی طرف آرہا تها-اس کے پیچهے اس کی چہیتی Bellatrix بهی آتی دکهائی دی- جسے دیکھ کر میرا منہ بن گیا-
“اس چهپکلی کا تو پہلے بندوبست کرلوں پهر دانست سے نبٹتی ہوں”-
میں نے دل میں ٹهانی اور اپنی چهڑی اس کی جانب لہرا کر “Ridikulus” منتر پڑها-
منتر پڑهتے ہی بیلاٹرکس چهپکلی بن گئی- اور دیوار پر چڑھ گئی-

اس کے بعد میں از دانست کی طرف متوجہ ہوئی جو غصے سے لال پیلا ہو رہا تها-
“آپ نے میرا پسندیدہ سیزن تباہ کر دیا- میں آپ کو نہیں چهوڑوں گا”- غصے سے چلاتے ہوئے وہ بالکل “تم جانتے ہو کون” ہی لگ رہا تها اور ناک تو بالکل دکهائی نہیں دے رہی تهی-
میں نے میسنے انداز میں مسکراتے ہوئے دل میں سوچا اور اس سے کہا-
“دیکهو میرے سامنے سے ہٹ جاو- ورنہ میرے پاس سب سے طاقتور چهڑی The Elder Wand ہے میں آپ کو Cruciatus curse سے بالکل اسی طرح ٹارچر کروں گی جیسے آپ لوگوں کو فارگو سیزن دکها کر کرتے ہو”-
میری بات سن کر وہ طنزیہ ہنسا اور بولا-
آپ کے پاس ایلڈر وانڈ ہے تو میرے پاس بهی Invisibility Cloak (غیبی چوغہ) ہے جس کی مدد سے میں غائب ہو جاوں گا اور پهر Avada Kedavara منتر سے آپ کو بهسم کر دوں گا”-

دانست کی بات سن کر میرا دماغ گهوم گیا- غصے کی ایک تیز لہر میرے جسم میں دوڑ گئی-
“آپ کی اتنی مجال کہ مجهے بهسم کرو- میں اس سے پہلے آپ کو بهسم کر دوں گی”-

اتنا کہہ کر میں نے ابهی اپنی پوزیشن سنبهالی ہی تهی کہ ایک دهیمی سی آواز نے ہم دونوں کو اپنی جانب متوجہ کر لیا-

“جب آپ دونوں ایک دوسرے کو بهسم کر لیں تو مجهے بتا دینا- میرے پاس Resurrection Stone (دوبارہ زندہ کرنے والا پتهر) ہے- میں آپ دونوں کو پهر سے زندہ کر دوں گی”-

ہم دونوں نے ایک ساتھ گردن گهما کر آواز کی سمت دیکها تو وو_ڈو دروازے میں کهڑی مزے سے مسکرا رہی تهی….

اس کے ساتھ ہی پٹ سے میری آنکھ کهل گئی-
پہلے تو سمجھ نہ آئی میں کہاں ہوں- اردگرد نظر دوڑائی تو اندازہ ہوا کہ وہ سب ایک خواب تها-

“اف دانست اللہ پوچهے آپ کو ، کیا کیا چیزیں ریکمنڈ کرتے رہتے ہو مجهے… ہنہ”-
میں نے بڑبڑاتے ہوئے اپنی دانست میں از دانست کو دو چار سنائیں اور “لا حول ولا قوۃ” پڑھ کر کروٹ بدل کر دوبارہ سوگئی-

امربیل

اپنا تبصرہ بھیجیں