گن فائٹر فلم

Movie: The Gunfighter
Short/Comedy 2014
Duration: 9 mins
IMDb: 8/10

ہے یہ عالم عجیب اور یہاں
ماجرا ہے عجیب تر درپیش
ویسٹرن کامیڈی مووی دی گن فائٹر.. شروع ہوتی ہے جب ایک کاو بوائے ایک بار میں داخل ہوتا ہے اور نریٹر کی آواز سنائی دیتی ہے 
“The weary gunfighter walked slowly through the saloon…”
اب نریٹر کو ہمارے ساتھ اس مووی میں موجود کردار بھی سن رہے ہیں.. اور یہ ہی اس مووی کی سب سے مزے کی بات ہے.. یہ آواز ہی سب کچھ ہے.. ایسے ان تمام کرداروں کو اپنے زیرو بم پہ گھماتی ہے.. کہ وہ ٹھٹھکتے ہیں, چونکتے ہیں, لڑکھڑاتے ہیں, پھر سنبھلتے ہیں… پر یہ سنبھلنا بھی اس عالم الغیب سے برداشت نہیں ہوتا کہ ڈوریاں کستا جاتا… راز کھولتا جاتا ہے… کردار خود پہ اپنا قابو کھوتے جاتے ہیں… اور وہ آواز ان سے وہی کروا کے دم لیتی ہے.. جو وہ چاہتی ہے.. یعنی
Ballet of Death..

اتنے سے تعارف سے یہ کوئی سنجیدہ مووی لگ رہی ہو گی… پر ایسا بلکل نہیں ہے.. یہ زندگی کی طرح مزاحیہ ہے… خاص طور پہ وہ سین جو 2:52 منٹ پہ آتا ہے
Ned: I am seriously not picturing that.
Narrator: But inside he was.
Ned: No I’m not.
Narrator: But he was.
Ned: No I’m not and that’s a final word.
پورے دس سیکنڈ کی خاموشی..
Narrator: But he was..
اور آپ اپنی ہنسی پہ کنٹرول کھو دیں گے…
پھر نیڈ کی جزباتی تقریر.. جو آپ کو خوابوں کی دنیا میں لے جائے گی… اور دنیا کے جنت بن جانے کا گمان پختہ ہو جائے گا… پر اگر مثالی دنیا کی تخلیق ہو جائے تو تفریح کیا رہے گی? سارا فن ہی ختم ہو جائے گا… تو اس تفریح کو جاری رکھنے کے لیئے آواز نیڈ کے اندر خوف پیدا کر دیتی ہے… اینڈ ڈھشوں… یہ ہے آپ کی دنیاا… جہاں نفرت, خوف, ہوس, اور بھوک ناچتی رہے گی…
ارے اس سب کے بعد پھر سے آپ اسے کوئی سنجیدہ ڈپریسنگ مووی مت سمجھ لیجئے گا… ڈارک کامیڈی بھی مت سمجھیئے گا… بہت ہلکا پھلکا مزاح ہے… 
نک آفرمین کی آواز میں واقعی کچھ ایسا ہے کہ کنٹرول کرتی ہوئی لگتی ہے… اور کیا ہی بے نیازگی جھلکتی ہے.. نہ تو آواز کچھ impose کر رہی ہے نہ کوئی مشورہ نہ حکم…لیکن پھر بھی آزادی سلب کیئے جاتی ہے…
سیٹ بہت زبردست ہے.. دروازے, کھڑکیاں, میز, بار.. سب بہت مناسب.. 
9 منٹس میں اداکاری کے جوہر دیکھیں.. ہر کردار نے اپنی باڈی لینگویج اور فیس ایکسپریشنز کو اپنے کردار کے ساتھ اور آواز کے الفاظ کے ساتھ خوب ملایا ہے..
مکالمے تو جاندار ہیں ہی.. اور مکالموں میں جو وقفے ہیں.. جہاں خاموشی ہے.. وہ بھی بڑی معنی خیز ہے.. 
Ned: Hell, this could be the beginning of a new utopia, a society based on fairness and tolerance where it don’t matter if you’re rich or poor…
Sally: Or a woman
Ned: Let’s not get carried away…
اگر آپ نو منٹس خوشگوار گزرانا چاہتے ہیں.. مزاح آپ کو سمجھ آتا ہے… اور آپ اسے انجوائے بھی کرتے ہیں… تو گن فائٹر دیکھ لیں میرے تبصرے کی طرح بورنگ بلکل نہیں ہے.. آخر میں ڈائریکٹر ایرک کزک کے الفاظ

“I’ve always thought it was important to point out the dangers of complete and total honesty. I mean, obviously, in an ideal world we wouldn’t do things that we’re ashamed of. But that world seems vanishingly distant so in the meantime, let’s all just learn to accept a little judicious truth-concealing (lying).”

اپنا تبصرہ بھیجیں