ایک خطرناک فلم

ہم میں سے بہت سے لوگ ہیں جو مختلف فیلڈز سے تعلق رکھتے ہیں مگر اس کے باوجود ایک قدر مشترک ہے جو ہم سب کو ایک دوسرے سے مماثل یا ممتاز کرتی ہے …وہ قدر ہے ہماری “نفسیات” یا Psyché.
انیسویں صدی نفسیات کے ادراک, اہمیت اور تجربات کے حوالے سے جہت و پیش رفت سے بھرپور ہے…یہی وہ وقت تھا جب بنیاد پڑی Psychoanalysisیا تحلیل نفسی کی… کچھ عظیم لوگوں میں جنہوں نے اس میدان کو اپنا خون جگر بخشا ان میں سگمنڈ فرائیڈ, کارل ژنگ اور اوٹو واان نمایاں ہیں..
اب بڑھتے ہیں فلم کے ریوو کی جانب. 
1905 میں ایک خوبصورت خاتون مس سبینا سپائلرین , ہسٹریا علاج کے لیے کارل ژنگ کے کلینک آتی ہے … اس کا نفسیاتی مسئلہ اس کی بچپن کی کسی تلخ یا خوشگوار یاد سے جڑا ہے (یہ آپ, سبینا یافلمسازکا perspectiveہوگاجس طرح بھی اسے آپ سمجیں) ژنگ کے نفسیات کو سمجھنے کے طریق کار ذرا مختلف ہیں, جب وہ موثر نہیں ہوتے تو وہ فرائیڈ کے طریقہ علاج برائے ہسٹریا کو آزماتا ہے اور Patient-Doctor discretion کے اخلاقی پہلو کو مدنظر رکھ کر علاج کرتا ہے… 
فلم آگے بڑھتی ہے ..اب دو سال بعد ژنگ اور فرائیڈ کا ایک مثالی پیشہ ورانہ تعلق اس وقت آزمائش کا شکار ہوتا ہے جب درمیان میں اوٹو گراس آتا ہے… اب تین نفسیات دانوں کی ایک بحث چھڑتی ہے جس میں تینوں اپنے تفکر و تدبر کے زاویے اپناتے ہوئے اپنا کام آگے بڑھاتے ہیں لیکن کیاسبینا تختہ تحقیق بننے پر راضی ہوتی ہے تو کیوں؟ یا نہیں ہوتی تو کس وجہ سے نہیں؟ یہ آپ کو فلم دیکھ کر معلوم ہوگا… لیکن اس فلم سے مجھے کافی ہیلپ ملی نفسیات کا 0.03 % جاننے کے لیے… یاد رہے یہ وہ زمانہ تھا جب Holocaust کے خواب بننے شروع کر دیے تھے جناب ادلوف ہٹلر نے… اوٹو گراس ڈاکٹر پیشنٹ کے تعلق میں قربت و محبت کے لیے مختلف زاویہ رکھتا ہے اور فرائڈ و ژنگ مختلف.. اب کون کیا پیش رفت کریگا اس کے لیے فلم دیکھیں تمام دوست…
کیا کارل ژنگ اور سبینا کا تعلق نفسیاتی رخ اختیار کریگا یا روحانی یا رومانوی یا کوئی اور … ؟ 
وہ کون سی driveیا motivationتھی جس نے اتنے بڑے پیمانے پر نفسیات دانوں کا کام بڑھایا..؟ 
کیا درد ایک طرح کے درمان کا نام ہے یا یہ محض ایک کیفیت؟ 
فلم میں دکھایا گیا ہے کہ کیسے بچپن کے معمولی واقعات, جنگی حالات اور کسی مسئلے کا کامل علم حالات و نفسیات و شخصیات کو تغیر میں ڈال دیتے ہیں اور یہ عوامل کچھ عرصہ یا تمام عمر ہمارے اندر کی خواہشات کو دباتے یا حالت لطف و غم میں لاتے رہتے ہیں … تینوں نفسیات دانوں کی مثلث جس کا مرکز ہے سبینا… زیادہ فوکس ل ژنگ اور سبینا پر ہوگا…فلم دکھائے گی کہ کیسے عظیم شخصیات کے خیالات کا اختلاف اور شدت نئی جہات جیسا کہ سائکو انالسز یا تحلیل نفسی (زیادہ نالج کے کیے شہزاد احمد کی تحلیل نفسی پڑھیں)کی بنیاد رکھتا ہے یا ان شخصیات کو دنیا سے الگ تھلگ کر دیتا ہے…
کس طرح سے نئے و پرانے نفسیاتی خیالات و علوم نے ہمیں ادب میں ڈی ایچ لارنس, فرانز کافکا, ریلکے, ولم ریخے, نطشے اور بہت سے دوسرے ناموں سے روشناس کیا… یہ آپ جب فلم کا پوسٹ مارٹم خود کریں گے تبھی اندازہ ہوگا… 

فلم کی کاسٹ میں Viggo Mortensen, Keira Knightly, Michael FasbanderاورVincent Cassel نے عمدگی سےبالترتیب فرائیڈ, سبینا, ژنگ اور اوٹو گراس کے کردار نبھائے… 
ریویو طویل ہے اس کے لیے معذرت…اپنی رائے سے آگاہ کیجیے گا تمام دوست… 🙂 خوش رہیے…
~ اے آر (لارنس)

اپنا تبصرہ بھیجیں